رضاعی بھتیجے سے نکاح

رضاعی بھتیجے سے نکاح
السلام علیکم.
سوال…
میری تایازاد بہن (کزن) نے بچپن میں دادی صاحبہ کا دودھ پیا ہے..
یعنی کہ میری تایازاد بہن نے میرے ابو کی والدہ کا دودھ پیا ہے..
کیا اُن کا یا اُن کی کسی بہن کا نکاح میرے ساتھ ہوسکتا ہے؟
عبدالرقیب

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
الجواب وباللہ التوفیق:
جب آپ کی چچا زاد بہن نے آپ کی دادی کا دودھ دو سال کے اندر پیا ہے تو وہ آپ کے والد کی بہن ہوگئی۔ اور آپ ان کے رضاعی بھتیجے ہوگئے۔ رضاعی بھتیجے سے نکاح کرنا حرام ہے۔ اس لئے آپ کی چچا زاد بہن سے آپ سمیت آپ کی کسی بھی چچا زاد یا پھوپھی زاد بھائی کا نکاح کرنا حلال نہیں ہے۔
في ’’القرآن الکریم‘‘:
{حرّمت علیکم اُمّہٰتکم وبنٰتکم واَخوٰتکم وعمّٰتکم وخٰلٰتکم وبنٰت الاخ وبنٰت الأخت} ۔ (سورۃ النسآء :۲۳)
و في ’’سنن أبي داود‘‘: عن عائشۃ رضی اللہ تعالی عنہا زوج النبی ﷺ، أن النبی ﷺ قال: ’’یحرم من الرضاعۃ ما یحرم من الولادۃ‘‘ ۔
(۱/۲۸۰، کتاب النکاح، باب ما یحرم من الرضاعۃ)
وفي ’’الدر المختار مع الشامیۃ‘‘: أسباب التحریم أنواع: قرابۃ مصاہرۃ، رضاع ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (حرم) علی المتزوج ۔۔۔۔ نکاح (أصلہ وفروعہ) علا أو نزل (وبنت أخیہ وأختہ وبنتہا) ولو من زنا ۔۔ وحرم (الکل) مما مرَّ تحریمہ نسبًا ومصاہرۃ (رضاعًا) إلا ما استثني في بابہ۔ (۴/۸۱ – ۸۵ ، فصل في المحرمات، دیوبند) (کفایت المفتی: ۵/۱۶۸، کراچی)
….
باقی جو چچا زاد بہنیں ہیں اُن سے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
الجواب وباللہ
جنہوں نے دادی کا دودھ نہیں پیا ہے ان سے نکاح حلال ہے.

واللہ اعلم بالصواب
شکیل منصور القاسمی